43

حویلی کہوٹہ ایک اور صحافی کی تذلیل سرعام تپھڑ اور گالم گلوچ

حویلی کہوٹہ آزاد کشمیر (تلافی نیوز) گزشتہ دنوں لبریشن سیل کی جانب سے تحریک آزادی کشمیر کے لیے کام کرنے والے ممبران کی جاری کردہ لسٹیس جو سوشل میڈیا پر بھی وائرل ہوئیں، میں حویلی سے تعلق رکھنے والے کشور خان کا نام شامل ہے۔کشور خان جو کہ انڈر میٹرک ہیں اور کسی بھی حوالے سے تحریک آزادکشمیر کے لیے ان کا کوئی کردار نہیں ان کا نام دیکھ کر مقتدر حلقوں میں حیرانگی پید اہو گئی دریں اثناء جونہی سوشل میڈیا پر یہ لسٹیں دیکھیں گئیں تو ضلع حویلی کے رہائشی سنئیر صحافی چیف ایڈیٹر جنت نظیر اعجاز خان نے بھی اپنی صحافتی ذمہ داری نبھاتے ہوئے یہ لسٹ اپنے سوشل میڈیا کے اکائونٹ فیس بک پر اپ لوڈ کی۔جونہی موصوف کشور خان نامی شخص نے پوسٹ دیکھی یا کسی حوالے سے پتہ چلا تو دوسرے دن معزز صحافی اعجاز خان جو کہ ان دنوں بسلسلہ عید الفطر اپنے آبائی علاقے حویلی آئے ہیں کسی ضروری کام سے فارورڈ کہوٹہ شہر کچہری چوک سے گزر رہے تھے تو مذکورہ شخص کشور خان نے جونہی اعجاز خان کو دیکھا تو آپے سے باہر ہو گیا بغیر کسی بات کیے گالم گلوچ اور بر ا بھلا کہنا شروع کر دیا اور تپھڑ مارنا شروع کر دیا ۔موقع پر موجود شہریوںنے مداخلت کر کے صحافی کو چھڑایا۔ سنئیر صحافی اعجاز خان کے ساتھ اس ناروا سلوک پر ضلع حویلی کے صحافتی ،سیاسی اور سماجی حلقوں میںانتہائی تشویش پائی گئی صحافی اعجاز خان کا حکومت اور صحافی برادری کو اس پر کارروائی کا مطالبہ کر دیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں