86

گلہار درس شریف کا ٹرانسفارمر تین روز سے 16000 روپے رشوت نہ ملنے پر لا پتہ

گلہار درس شریف کا ٹرانسفارمر تین روز سے 16000 روپے رشوت نہ ملنے پر لا پتہ
مورخہ 26.05.2020 سے گلہار درس شریف کے ٹرانسفارمر کی تلاش جاری تھی مگر پتہ چلا کہ مبلغ 16000 روپے رشوت نہ ملنے پر لائین سپرنٹینڈنٹ گلہار شریف وقاص صاحب کے قبضہ میں قید و بند کی صعوبتیں برداشت کر رہا ہے۔ مورخہ 26.05.2020 رات تھوڑی سی ہوا چلی اور جناب ٹرانسفارمر بھی چل بسے۔راقم نے جناب لائین سپرنٹینڈنٹ وقاص صاحب کو ٹیلیفون کر کے بتایا کہ گلہار درس شریف کا ٹرانسفارمر نہیں چل رہا۔دیکھتے دیکھتے رات مچھروں اور گرمی کی نظر ہوگئ آنکھیں کھلی ہی رہیں اور مچھر بھی مزے لیتے رہے۔
المختصر خدا خدا کر کے صبح ہوئ ٹرانسفارمر صاحب کو اتار کر ذبع خانہ لے جایا گیا جہاں ٹرانسفارمر موصوف کی مرمتی مطلوب قرار دی گئ۔
شنید میں آیا کہ لوہا بری طرح طرح پگھل چکا تھا۔دو کوائل کی مرمتی محکمہ برقیات کے ذمہ پڑ گئ اور مین کوائل تھری فیز کی مرمتی ٹرانسفارمر کے صارفین پر بذریعہ ٹیلیفون جناب وقاص صاحب نے ڈالی اور چودھری محمد ظہیر ولد حاجی چودھری امیر حسین محلہ دامان کے ذریعے آٹا چکی گلہار شریف کے ملازم وحید حسین اور اہل محلہ پر ڈالی جس نمبر پر آٹا چکی والے کو کال کی گئ وہ چودھری محمد جنید فروٹ والے کا تھا۔
میرے دوستو شائد یہ سچ مجھے مہنگا پڑے مگر اب حسینیت اور یزیدیت آمنے سامنے ہے انشاء اللہ ضرور مقابلہ کروں گا وہ بھی اکیلا اور محکمہ برقیات گلہار کے بڑے راز افشاء کروں گا۔
راقم نے چکی والےلڑکےوحید حسین،جنید چودھری، امجد چودھری اور طارق محمود چودھری کی موجودگی میں جنید کے فون سے چودھری محمد ظہیر کو کال کر کے سپیکر آن کر دیا اور موصوف نے درج بالا بات ہی Repeat کی اور 16000 کے انجکشن کا ذکر کیا۔فون بند کر دیا گیا۔وحید سے لے کر امجد اور راقم تک حلفیہ بیان دینے کے لیے تیار ہیں کہ موصوف سپرنٹینڈنٹ نے رقم مانگی۔اگر قانونی طور رقم صارفین کو دینا ہوتی ہے تو راقم غلطی پر ہے اور معزرت خواہ بھی سو بار جناب۔
مزید برآں راقم نے جنید کی دوکان کے اندر جا کر موصوف کو اپنے نمبر 03416916182 سے کال کی بتایا کہ فلاں بول رہا ہوں۔راقم نے اپنے موبائل کا سپیکر بھی ان کیا کال ریکارڈنگ پر لگا دی جو میری زندگی کا پہلا واقع ہے۔ ریکارڈنگ محفوظ ہے۔اللہ سے معافی مانگتا ہوں۔موصوف نے پھر راقم کو کہا کہ ٹرانسفارمر پر پیسے لگیں گے پوچھا کتنے؟ مجھے اگلوانا مطلوب تھا حکم ہوا16000 روپے ریکارڈنگ بھی لگاؤں گا۔لیکن آڈیو ریکارڈنگ لگانا ٹیکنکل مسلہ ہے بہر کیف کوئ طریقہ کرکے لگا دوں گا۔
اب ارباب اختیار سے باادب بات کروں گا کہ بل کو یا ماہوار رشوت فکس کر دو۔تا کہ معاملات یکسو رہیں۔
ارباب اختیار سے با ادب گزارش ہے کہ ہمارا ٹرانسفارمر کس جرم کی پاداش میں تین روز سے بندی خانے میں ہے؟؟؟؟
جب کہ وارڈ نمبر 17 گلہار کالونی کا ٹرانسفارمر آج ہی خراب ہوا اور آج ہی مرمت کروا کر لگا دیا گیا ہے۔یہ بات کسی عزیز نے بتائ کہ وارڈ نمبر 17 والوں کی پوسٹ لگی ہوئ تھی۔
ہمارے چھوٹے چھوٹے بچے آج تیسرے روز سے بوجہ گرمی بلک رہے ہیں کیوں 16000 روپوں کی خاطر ظالم تیرے بھی بچے ہوں گے۔ امید قوی ہے کہ یہ 16000 سولہ دنوں میں جا کر بدمعاشی چارجز وصولی پر ہی لگے گا۔
حرف حرف حلفیہ بر حقیقت مبنی ہے۔
دیگر کرتوت دوسری پوسٹ میں لکھوں گا۔ محکمہ برقیات والو مسکین کو معاف کر دینا۔ سفارشی کوئ نہیں ہے۔
عاشق حسین چودھری ریٹائرڈ اسسٹنٹ ایجوکیشن آفیسر کوٹلی،
منتظم اعلیٰ زاویہ انٹرنیشنل رائٹرز فورم۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں