46

مکرمی جناب وزیر اعظم پاکستان!

مکرمی جناب وزیر اعظم پاکستان!
اسلام علیکم! امید ہے مزاج اچھے ہوں گے،آج میں اس کھلے خط کے ذریعے آپ کی توجہ ایک انتہائی اہم مسئلے کی جانب مبذول کرانا چاہتا ہوں کہ سیز فائرلائن پر ہندوستانی فوج کی جانب سے کی جانیوالی گولہ باری کے نتیجے میں جہاں تاﺅ بٹ تا بھمبر پھیلی منحوس خونی لکیر کے مختلف سیکٹرز پر کشمیری موت کے منہ میں اترتے ہیں،وہیں تین اضلاع سدھنوتی ،پونچھ اور کوٹلی کے سنگم پر واقع سیاحتی مقام تتہ پانی(ہاٹ سپرنگ) سے ملحقہ چار سیکٹرز تتہ پانی ،درہ شیر خان،بٹل،مدارپور،دھنواں گوئی کے متعدد علاقے بھی شکار ہوتے ہیں۔
جناب وزیر اعظم پاکستان ! آپ کی پاکستان میں برسراقتدار حکومت کو دوسال ہوچکے ہیں، آپ کی جانب سے کشمیری عوام کے پیدائشی حق حق خود ارادیت کی ترجمانی اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کی تقریر میں ہوئی جسے ریاست بھر کے عوام نے سراہتے ہوئے آپ سے توقع وابستہ کررکھی ہے اقوام متحدہ سے ریاست جموں کشمیر میں آزادانہ ریفرنڈم کے انعقاد کے لیے ٹھوس بنیادوں پر اقدامات اٹھائیں گے تاکہ کہ کشمیری اپنے مستقبل کا فیصلہ خود کرسکیں۔
آپ نے سیز فائر لائن کے عوام کے لیے پیکج کا اپنے دورہ مظفر آباد کے دوران اعلان کیا تھا،اس پیکج کے ثمرات عام آدمی تک تاحال نہ پہنچ سکے،میں بحثیت شہری وقلمکار آپ کے نوٹس میں لانا چاہتا ہوں کہ تتہ پانی سے جڑے ان 4سیکٹرز کے متاثرہ شہری آج بھی کسمپرسی کی زندگی گزار رہے ہیں۔
سی ایف ایل پرسکولوں،کالجوں،اسپتالوں کے علاوہ سویلین آباد پر مارٹرز گولے داغ کر کشمیری بچوں،جوانوں،بزرگوں اور عورتوں کو نشانہ بنایا جاتا ہے۔
جناب وزیر اعظم پاکستان !رواں ماہ ہندوستان کی سفاک افواج کی جانب سے کیجانے والی گولہ باری سے تتہ پانی درہ شیر خان میں جانی ومالی نقصان کا اختصار کا اعادہ کرتے ہوئے آپ کے علم میں یہ لانا چاہتا ہوں کہ درہ شیر خان کے علاقہ بہک میں مکان پر سفاک فوج کی جانب سے گرایا جانے والا مارٹر گولہ جس کے نتیجے میں 11سالہ کم سن طالبہ ارقراءجو راولپنڈی لیجاتے ہوئے کہوٹہ کے مقام پر خالق حقیقی سے جاملی،اسی خاندان کی بزرگ خاتون زخمی ہوئیں جبکہ شہید طالبہ کا 17سالہ بھائی اقرار شدید زخمی ہوا اس وقت سی ایم ایچ راولپنڈی میں زیر علاج ہے۔
بعینہ تاہی کے علاقہ میں تین خواتین زخمی ہوئیں جن میں سے ایک کو تشویش ناک حالت میں سی ایم ایچ راولپنڈی منتقل کیا گیا،اسی طرح آئے روز ہمارے شہری اس سفاکیت کا نشانہ بن کر موت کی وادی کے مسافر بن جاتے ہیں۔
گولہ باری سے متاثرہ شہریوں کی املاک کو نقصان پہنچتا ہے،حالیہ گولہ باری سے مناسب طبی سہولیات اور حفاظتی بنکرز نہ ہونے کے باعث متعدد شہری لقمہ اجل بن رہے ہیں۔
مقامی شہریوں کے مطابق وفاقی،آزاد جموں کشمیر کے عوامی وانتظامی نمائندوں میں سے تاحال کسی نے حالیہ گولہ باری سے یہاں کے عوام کا سوائے اخباری بیانات کے حال پوچھنے کی زحمت نہ کی۔
جناب وزیر اعظم پاکستان! میں بحثیت شہری وقلمکار آپکو سب سے متاثرہ سیکٹر تتہ پانی درہ شیر خان بٹل کے علاقوں سمیرت سی ایف ایل کے تمام علاقوں کا خود دورہ کرکے یہاں کے عوام کا حال جاننے کی دعوت دیتا ہوں،آپ سے گزارش ہے کہ سیز فائر لائن کے تمام بی ایچ یوز،آر ایچ سیز ،تحصیل ہیڈکوارٹرز اسپپتالوں کو ایکٹو کرتے ہوئے ان میں سرجن ڈاکٹرزبمعہ آلات فوری تعیناتی ہنگامی بنیادوں پر کی جائےتاکہ گولہ باری سے متاثرہ شہریوں کا بروقت آپریٹ ہوسکے،4سیکٹرز سے جڑے تتہ پانی خوبصورت سیاحتی مقام کے لیے کم ازکم 100بیڈ اسپتال کی منظوری دی جائے تاکہ ہندوستانی گولہ باری سے متاثر ہونے والے شہری کہوٹہ ہولاڑ کے راستوں میں اپنی جانیں نہ گنوا سکیں،اس اسپتال سے تین اضلاع سدھنوتی،پونچھ اور کوٹلی کے متعدد مضافات کے عوام بھی استفادہ کرپائیں گے۔
جناب وزیر اعظم پاکستان!آزاد جموں کشمیر کے متعدد شہری کینسر جیسے موذی مرض میں مبتلا کرہو بھی لقمہ اجل بن ہے ہیں،ریاست کے دس اضلا ع میں کینسر کا کوئی اسپتال موجود نہیں، میرپور اورپونچھ ڈویژن کے درمیان مناسب جگہ پر شوکت خانم طرز پر”جموں کشمیر کینسر اسپتال“ اور گلگت بلتستان کینسر کا قیام عمل میں لاکر کشمیری عوام کی اس جاں لیوا بیماری کا علاج ممکن بنائیں۔
جناب وزیراعظم پاکستان! آزاد جموں کشمیر میں مختلف حادثہ جات کی صورت میں جل جانے والے شہریوں کے علاج کے لیے مخصوص برن سینٹر بھی موجود نہیں،پاکستان میں قائم برن سینٹر کھاریاں میں کئی شہری پہنچانے سے قبل ہی دم توڑ جاتے ہیں۔
آپ کی اس جانب بھی توجہ مبذول کراتے ہوئے ریاستی عوام کی مشکلات کے پیش نظر گلگت بلتستان اور آزاد جموں کشمیر میں (برن سینٹرز،کینسر اسپتال،سیز فائر لائن کے عوام کے لیے تتہ پانی100بیڈ اسپتال ) کی مانگ بذریعہ پرنٹ،الیکٹرانک وسوشل میڈیا رکھی جاتی ہے۔
جناب وزیر اعظم پاکستان! ہم آپ سے یہ توقع رکھتے ہیں کہ سیز فائر لائن کے شہریوں کی آواز اس مکتوب ،میڈیا وسوشل میڈیا سے آپ تک پہنچنے کے بعد ترجیحی بنیادوں پر آپ اس آواز کو سن کر عوام کو ان منصوبہ جات کی تفویض کو یقینی بنائیں گے جوکہ ریاستی ووفاقی حکومت پاکستان کی ذمہ داری بھی ہے۔
اللہ آپکا اور ہمارا حامی وناصر ہو۔
والسلام
آپ کے خیر اندیش عوام
سیز فائرلائن و آزاد جموں کشمیر
بذریعہ سخاوت خان سدوزئی جرنلسٹ جموں کشمیر

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں